چھاتی کا کینسر Breast Cancer

عورتوں میں سب سے عام جو کینسر ہے وہ بریسٹ کینسر یا چھاتی کا کینسر Breast Cancer ہے جبکہ مردوں میں سب سے زیادہ عام پھیپھڑوں اور پراسٹیٹ کا کینسر ہیں۔ چھاتی کا کینسر مشرقی عورتوں کو شرم و حیا کی وجہ سے پتا ہی نہیں چل پاتا۔ جبکہ خود تشخیصی سے اسکا آسانی سے پتا لگایا جا سکتا ہے۔ ہر کینسر اگر شروع میں پکڑ لیا جاۓ تو مکمل اور شافی علاج ہو جاتا ہے ورنہ بعد میں چانس نہیں رہتے۔

جسم کے ہر حصے کے خلیات مختلف ہوتے ہیں اور ان میں سے زیادہ تر اپنی تقسیم اور مرمت ایک ہی طرح سے کرتے ہیں۔ عام
طور پر، خلیات ایک ترتیب سے تقسیم ہوتے ہیں۔ مگر، اگر یہ عمل قابو سے باہر ہو جائے تو، خلیات تقسیم در تقسیم ہوتے رہتے ہیں
اور ایک ِگلٹی کی شکل اختیار کر لیتے ہیں جسے ٹیومرکہا جاتا ہے (بشکریہ میکملن کینسر سپورٹ)

چھاتی کا کینسر Breast Cancer

مفید معلومات

  • مردوں میں بھی چھاتی کا کینسر ہو سکتا ہے مگر بہت کم۔
  • جدید سایؑنس ابھی تک چھاتی کے کینسر کی وجہ معلوم نہیں کرسکی۔
  • چھاتی کا کینسر انفیکشن نہیں کرتا اور دوسروں میں منتقل نہیں ہوتا۔
  • چھاتی کے کینسر کی کئی اقسام ہیں مگر ان سب کا علاج ایک ہی طریقے سے کیا جاتا ہے۔
  • چھاتی کے کینسر کے چار مراحل ہوتے ہیں۔ پہلے مرحلے میں کینسر چھوٹا ہوتا ہے اور چھاتی میں موجود ہوتا ہے۔ دوسرے اور تیسرے مرحلے میں اردگرد کے علاقہ میں پھیل جاتا ہے جبکہ چوٹھے مرحلے میں جسم کے دیگر حصوں میں پھیل جاتا ہے۔ پہلے مرحلے میں کینسر کے خلیات بہت آہستہ بڑھتے ہیں اور پتہ نہیں چلتا۔ دوسرے اور تیسرے درجے میں بہت تیزی سے بڑھتے ہیں۔
  • پہلے مرحلے میں اگر کینسر ہو تو گلٹی کی جسامت 2 سنٹی میٹر یا اس سے کم ہو گی اور بغل میں موجود لمف نوڈز تک نہیں پھیلی ہو گی۔
  • کینسر کے خلیات پر ریسپٹر (receptors) ہوتے ہیں جو اسٹروجن اور پروجسٹرون کو اپنے ساتھ منسلک کر لیتے ہیں اسی لیے وہی کینسر کہلاتا ہے جسکے ساتھ منسلک ہوتے ہیں۔ بعض اوقات پروٹین ایچ ای آر ( 2ہیومن ایپی ڈرمل گروتھ فیکٹر) کے ساتھ بھی منسلک ہو جاتے ہیں۔
  • کیموتهیراپی کی بعض ادویات کی وجہ سے بال گرنا شروع ہو جاتے ہیں، جو کہ عام طور پر ایک عارضی مسئلہ ہو سکتا ہے.
  • عام طور پر  آپ کو چهاتی کے کینسر کے علاج کے دو سال بعد تک حاملہ ہونے کا خطرہ نہیں لینا چاہیے۔
  • کہا جاتا ہے کہ سرجری کے دوران اگر ایک بھی سرطانی خلیہ رہ جاۓ تو دوبارہ ہو سکتا ہے۔
  • حکیم طارق محمود کے مطابق اگر ہم اپنی قوت مدافعت 10 گنا بڑھا لیں تو کینسر سے نجات مل سکتی ہے اور محض پھل سبزیاں اور ضروری وٹامن کے ساتھ کامل یقین اور ایمان کینسر پر قابو پا لیتا ہے۔
  • جب کویؑ گلٹی دس لاکھ خلیوں پر مشتمل ہوتی ہے تو اسکا وزن 1 گرام کا ہزارواں حصہ ہعنی 1 ملی گرام ہوتا ہے اور یہ چھوٹے موٹے سکین سے نظر بھی نہیں آتی۔ اب یہی گلٹی صرف 10 بار تقسیم ہو جاۓ تو 1 ارب کینسر کے خلیات پر مشتمل ہو جاتی ہے اور اسکا وزن 1 گرام ہو جاتا ہے۔ اب یہ کیمرے کی آنکھ سے نظر بھی آتی ہے اور محسوس بھی کی جا سکتی ہے۔ (بشکریہ حکیم ظارق محمود)
  • ماہانہ ایام میں چھاتیوں میں دودھ بننے کا عمل شروع ہوتا ہے اس دوران اندرونی طور پر کیؑ خلۓ نۓ بنتے ہیں اگر حمل قرار نہ پاۓ تو یہی سلسلہ اگلے ماہ پھر چلتا ہے۔ قدرت نے چھاتی کہ جنسی کشش کے لیے نہیں بچے کو دودھ پلانے کے لیے پیدا کیا ہے۔ جہاں جسم انسانی کے باقی سب اعضاء کسی غیر معمولی تبدیلی کے بغیر اطمینان سے زندگی بھر اپنے مقررہ فرایؑض کی ادایؑگی میں مشغول رہتے ہیں وہاں سینے میں جو غیر معمولی مادی اور کیمیاوی تبدیلیاں واقع ہوتی ہیں ان کے نتیجے میں خلیوں کے اندر DNA میں گڑبڑ کا خدشہ اسی تناسب سے زیادہ ہوتا ہے۔ ان کو ہر وقت یہ حکم ملتا رہتا ہے “اب یہ کام شروع کرو اب یہ کام بند کرو” اسی حالت میں یہ تعجب خیز بات نہیں کچھ عورتوں کو سینے کا سرطان ہو سکتا ہے۔

صرف عورتوں میں ہونے والے کینسرز

علامات و وجوہات

چھونے سے یا معایؑنہ کروانے سے گلٹی محسوس ہوتی ہے۔ اسکی ابھی تک کویؑ مستند وجہ معلوم نہیں ہو سکی ہے۔ تاہم کہا جاتا ہے کہ

  • ہارمون جن میں ایسٹروجن اور پروجسٹرون شامل ہیں ان میں کویؑ بگاڑ ہو جاتا ہے۔
  • اس کینسر کا خطرہ عمر کے ساتھ بڑھتا ہے۔
  • اگر اپکو چھاتی کے دیگر عوارض کا سامنا ہو چکا ہے۔
  • علاوہ ازیں کثرت شراب و سگریٹ نوشی، موٹاپا، موروثی، چربیلی غزا کا کثرتِ استعمال، موروثی، چھاتی میں گلٹی، چھاتی کے سایؑز و جسامت میں تبدیلی، نپل کی ہیت میں تبدیلی، نپل پر سرخ دھبے، بغل میں سوجن وغیرہ
  • دراصل خواتین میں چھاتی کے خلیات بے قابو ہو جایں تو یہی کینسر ہے۔
  • کسی بچی کو 9 سال سے قبل ہی ایام آنے لگے تو یہ بھی خطرے کی علامت ہے۔
  • دودھ نہ پلانا
  • ماحولیاتی آلودگی, آلودہ پانی
  • علاج میں تاخیر یا غلط علاج کروانا
  • مصنوعی کھانے کے رنگ، گوشت کا کثرتِ استعمال
  • پریشیانی، فکر، غم، صدمہ
  • تنگ بریزیؑر brazier

تشخیص

  1. علامت کے طور پر ٹٹولنے سے گلٹی محسوس کی جاسکتی ہے۔
  2. میموگرام کم طاقت کا حامل چھاتی کا ایک ایکسرے ہے اس سے تشخیص ہو جاتی ہے۔
  3. یا پھر الٹرا سأونڈ سے بھی یہی کام لیا جاتا ہے۔
  4. فائن نیڈل اسپیریشن (ایف این اے) سے معالج ایک عمدہ سویؑ کے زریعے گلٹی میں سے متاثرہ خلۓ حاصل کرتا ہے تاکہ ٹیسٹ کے لیے لیبارٹری کو بھیجا جا سکے۔
  5. لمفاوی نوڈز کاالٹراسأونڈ اور ایف این اے کے لیے آپ کی بغل میں موجود لمفاوی نوڈز کا الٹرا سأونڈ بھی کیا جا سکتا ہے الٹرا سأونڈ میں کسی نوڈ میں سوجن یا کوئی بے قاعدگی نظر آنے کی صورت میں، ڈاکٹر ان پر ایف این اے کرے گا.
  6. Mammography سے الٹراساؤنڈ کی مدد سے تشخیص کی جاتی ہے۔ 45 سال سے اوپر کی عورتوں کو ضرور کروانی چاۓ۔

چھاتی کا کینسر Breast Cancer

پرہیز و غزا

اپنا معاینہ اوپر والے طریقہ جات کے تحت کروایں کیونکہ ابتداء میں علاج آسان ہے اور دیر سے علاج کرنے سے ادویات کے ضمنی اثرات بہت زیادہ ہیں۔  ایک تو خدا کی زات پر مکمل ایمان اور یقین رکھیں دوسرا غزا کا زیادہ حصہ پھل اور سبزیوں پر مشتمل ہونا چاۓ ان میں بھی سبزیاں بغیر پکاۓ کھانی چایؑیے۔ اسکے ساتھ بغیر چھنے آٹے کی روٹی، کچھ اضافی وٹامن کھانے چایؑیے۔

علاج

  1. پروٹین ریسپٹر والے چھاتی کے کینسر میں  ٹراسٹوزومیب (ہرسیپٹن®) سے عمدہ نتایؑج ملے ہیں۔
  2. سرجری کی صورت میں متاثرہ خلیات کے ساتھ کچھ صحت مند خلیات بھی نکال دیے جاتے ہیں اور بعض اوقات پوری چھاتی ہی نکالنی پڑتی ہے اسے mastectomy کہتے ہیں۔
  3. بعض اوقات نایؑوپسی کے دوران اگر گلٹی چھوٹی ہو تو عمومی بے ہوشی یا مقامی بےحسی کی دوا دے کر پوری کی پوری گلٹی ہی نکال لی جاتی ہے۔ ساتھ ہی چھاتی کا ایکسرے اس لیے کیا جاتا ہے کہ آپریشن سے پہلے یہ تسلی کر لی جائے کہ آپ کے پهیپهڑے صحت مند ہیں۔ اگر کینسر شناخت ہو جاۓ تو خون کا ٹیسٹ، ایکسرے، ایم، آر، آیؑ، سی ٹی سکین وغیرہ کرواۓ جا سکتے ہیں۔
  4. ریڈیوتهیراپی، ہارمونل تهیراپی اور کیموتهیراپی جیسے طریقہ ہاۓ علاج استعمال کئے جا سکتے ہیں- عموماً ایک سے زیادہ طریقے کا علاج استعمال ہوتا ہے۔
  5. ہارمونل تهیراپیز جسم میں ایسٹروجن کی سطح کو کم یا ایسٹروجن کو کینسر کے خلیات سے منسلک ہونے سے روکنے کا کام کرتی ہیں.
  6. ٹراسٹوزومیب (جسے عام طور پر ®Herceptin کہا جتا ہے) سے چهاتی کے کینسر میں مبتلا بعض خواتین کا علاج کیا جا سکتا ہے اور دوبارہ ہونے سے روکتی ہے۔

دیسی علاج

  1. کہا جاتا ہے کہ سچی بوٹی جسے دھماسہ (Gagonia) بھی کہتے ہیں خشک یا تازہ مٹھی بھر پانی میں رات کو بھگو دیں اور صبح آدھا گلاس نہار منہ پلاتے رہیں۔ بے حد کڑوی بوٹی ہوتی ہے اور بارش کے پانی میں نہ توڑیں کیونکہ اسکا اثر کم ہو جاتا ہے۔ بنیادی طور پر بلڈ کینسر میں یہ بوٹی کافی معاون رہی ہے مگر اسکے دیگر کینسر کی اقسام پر بھی استعمال کیا جا سکتا ہے۔
  2. خاص یوگا ورزشیں ہیں جن سے پھیپھڑے کافی حد تک تندرست کۓ جا سکتے ہیں۔ تفصل دیکھۓ, سانس کی ورزشیں دیکھیں
  3. 10 گرام وٹامن سی صبح اور 10 گرام شام کو دیں اگر مریض کی حالت زیادہ خراب ہے جگر تلی بڑھے ہوۓ ہیں تو 10 گرام منہ کے زریعے اور 10 گرام انجیکشن کے زریعے دیں۔ کؑی لوگوں مین اسکا کافی افاقہ ہو چکا ہے۔ افاقے کے بعد بھی روزانہ 10 گرام کھاتے رہنا پڑتا ہے۔

 

 

 

 

 


انتباسات:

  • میکملن کینسر سپورٹ Macmillan Cancer Support
  • حکیم ظارق محمود چغتایؑ
  • امریکن کینسر سوسایؑٹی American Cancer Society

Comments are Closed