دل Heart

” آگاہ رہو کہ جسم میں ایک ٹکڑا ایسا ہے کہ اگر وہ ٹھیک رہے تو پورا جسم ٹھیک رہتا ہے اور اگر اس میں بگاڑ پیدا ہوجائے تو پورا جسم بگڑ جاتا ہے، خوب سمجھ لو کہ وہ ٹکڑا دل ہے ” (الحدیث)

دل Heart

 

دل Heart ایک پمپ کی طرح ھے آج تک کوؑی ایسا پمپ نھیں بنا جو رات دن بغیر رکے کام کرتا رھے۔ دل کا کام دوران خون کو جاری رکھنا ھے اور یہ بھت ضروری کام ھے جس کی مدد سے خوراک اورآکسیجن جسم میں جزب ھوتی اور فاضل مادے خارج ھوتے ھیں۔ یہ سارے کام دوران خون ھی انجام دیتا ھے۔ 

غزا و پرھیز: یہ چیزیں کھایں سیب، ناشپاتی، خوبانی، کیلا، چقندر، بند گوبھی، امرود، گاجر، چیری، اخروٹ، انجیر، مچھلی، لہسن، سنگترہ، انگور، سبز چاۓ، کافی، لیموں، مشروم، جو، زیتون کا تیل، بیاز، تخم السی و بالنگو، سٹرابھری، رسپبھری، چیری، ڈارک چاکلیٹ، اومیگا-3، ٹماٹر، پالک۔

اسکے علاہ روزانہ 2 دفعہ صح شام یا پھر ہر کھانے کے بعد دانت صاف رہکھیں اور وزن کم کر کے نیند پوری کیا کریں۔ بعض لوگوں نہ سگریٹ پیتے ہیں نہ شراب پھر بھی نیند کی کمی سے بھی ھارٹ اٹیک ہو جاتا ہے۔ تادیر ایک ہی حالت میں رہتے ہوۓ بھی نہ بیٹھیں۔

مقویاتِ قلب: آبِ گزر، کیوڑا، تخم بالنگو، جندبیدستر، جدوار شیریں، خس ہندی زرد، زبرجد، زہرہ مہرہ، یشب انگوری، فیروزہ نیشاپوری، عقیق یمنی، مرجان، یاقوت، تخم ریحان، نیلم محلول، مربہ، گزوپیٹھا، انارشیرہں، آنولہ، ابریشم، گل گڑہل، گل لیمون، پوست ترنج، دارچینی، ورق نقرہ، ورق طلاء، ورق طلاء لاجورد، عودصلیب، الایؑچی، مشک، عنبر، رام تلسی، صندل، بنسلوچن، بہمن سرخ، بہمن سفید، گاؤزبان درونج عقربی، بالچھڑ، ناگرموتھ، شقاقل، اگر، نارنج، پان، جنگلی تلسی، بسد، نیلوفر، موتی صدف وغیرہ (کتاب المفردات)

روحانی علاج

ہرنماز کے بعدداہنا ہاتھ دل کے اوپر رکھ کر سات مرتبہ یہ دعاپڑھیں پھر ہاتھ پر دم کرکے دل پر تین مرتبہ پھیرلیں۔ اللہ تعالی کے فضل سے ہر قسم کے امراض قلب سے حفاظت رہے گی۔ اَللّٰھُمَّ یَا قَوِیُّ القَادِرُ المُقتَدِرُ قَوِّنِی وَقَلبِی (اے اللہ! اے طاقتور! اے تمام قدرتوں اور طاقتوں کے مالک! مجھے اور میرے دل کو تقویت عطا فرما)۔

 

دلی معلومات

  1. دل کی جسامت اس آدمی کی بند مٹھی کے برابر ھوتی ھے۔

  2. دل کے مریض کو ایسا کوؑی بھی کام نہیں کرنا چایۓ جس سے دل پر زور یا دباؤ پڑے۔

  3. دل کے چار خانے اور انکے چار ھی والو لگے ھوتے ھیں۔

  4. adrenaline glands جو کہ گردوں کے اوپر واقع ہوتے ہیں یہ خون کے دورے کے رریعے دل تک پہنچ کر دل کی رفتار برھاتے ہیں اور دل کو طاقت دیتے ہیں۔

  5. کیسنر کے بعد دل کی بند شریانوں پر تحقیقات ہر پیسہ خرچ کیا گیا ہے۔

  6. شریانوں میں صاف خون جبکہ وریدوں میں گندا خون آتا ھے۔

  7. دل کے والو تنگ یا لیک ھونے کی صورت میں اسکی آواز میں فرق آ جاتا ھے۔

  8. دل 70٪ آکسیجن چربی کو استعمال کرنے کے لیے صرف کرتا ھے۔

  9. Ankle Brachial Index سے تالیوں کی تنگی کا پتہ لگایا جا سکتا ہے۔

  10. ایک عام آدمی کو اس وقت تک دل کی کویؑ تکلیف نھیں ھوتی جب تک 70٪ سے زیادہ شریان بند نہ ھو جاےؑ-

  11. cardiac conduction system کےزریعے دل کو کرنٹ ملتا رھتا ھے تا کہ دل کام کرتا رھے۔ مزید ضروری الیکٹرولایؑٹس (سوڈیم، پوٹاشیم، کیلشیم، میگنیشیم) ہی دل کی دھڑکن کا باعث بنتے ہیں۔ اگر ہم مناسب مقدار میں نمک نہیں کھاتے تو دل بند ہو سکتا ہے۔

  12. اگر کویؑ شریان آھستہ آھستہ بند ھونی شروع ھو جاےؑ تو قدرتی طور پر چھوٹی چھوٹی وریدیں بننا شروع ھو جاتی ھیں۔ یعنی قدرتی بایؑ پاس بن جاتا ھے۔

  13. دل کے دورے کا سب سے کم خطرہ جاپان اور سویڈن کے لوگوں کو ھے کیونکہ وہ جفاکش، قدرتی خوراک کھانے والے اور بغیر چینی اور دودھ کے کافی پینے والے ھیں۔

  14. جھاں پانی میں نمکیات نہ ھوں یا وہ سافت واٹر ھو تو یہ دل کا دورہ بڑھا دیتا ھے۔

  15. تقسیم ھند سے قبل گھی مکھن کے باوجود تکلیف ڈھونڈنے سے بھی نھیں ملتی تھی مگر اب گھی مکھن وھی ھے اور جفاکشی ختم ھو چکی ھے۔

  16. انسولین والے مریضوں کو دوگنا بلکہ چار گنا دل کا خطرہ ھوتا ھے۔

  17. شوگر کے مریضوں میں اچانک دل کے دورے کی شرح عام لوگوں سے 2-3 گنا زیادہ ھے۔

  18. شوگر کے مریضوں میں دل کا درد محسوس کرنے کی حس بھی کم ھو جاتی ھے لہزاشدید دورے کی صورت میں بھی انکو معمولی درد ھوتا ھے جو کہ بھت خطرناک ھے۔

  19. خون کا لوتھڑا (پلاک) دراصل کیسڑول (چربی) کا مجموعہ ھوتا ھے-

  20. شوگر کے مریضوں کا خون گاٖڑھا ھوتا ھے اسکی وجہ کیسڑول اور چربی ھی ھے لہزا انکو اسپرین کا مسلسل استعمال کرنا چاھیے اس طرح سے 15٪ دل کے دورے کے چانس کم ھو جاتے ھیں۔

  21. دل کے دورے سے ھونے والی اموات میں سے 30٪ وجوھات سگریٹ نوشی ھے۔

  22. ویسے تو فایؑ برینوجن مادہ خون جمنے میں مدد دیتا ھے مگر دل کے دورے کے دوران اسکی مقدار بھی بڑھی ھوتی ھے۔

  23. شوگر کے مریضوں میں کیسڑول کم کرنے والی اور خون پتلا کرنے والی خوراک اور ادویات دیں۔

  24. گلایؑ کیٹڈ HB کی خون میں زیادتی بھی دل کے دورے کا پیش خیمہ ھوتی ھے۔

  25. جنرل آف امریکن کالج آف کارڈیولوجی کے مطابق خون کے لوتھڑے بننے کی وجہ سگریٹ نوشی ھے۔

  26. WHO کے 2000ء کے مطابق پوری دنیا میں سب سے زیادہ اموات دل کی وجہ سے ھویؑں۔

  27. CDC کی ایک ریورٹ کے مطابق ٹاپ 10 اموات کی وجہ کچھ یوں ھے۔ دل (13٪)، کینسر (8٪)، سانس (13٪)، دماغی صدمہ (8٪)، پیچش (6٪) اور شوگر (3٪) رھی۔

  28. ھر 5 میں سے ایک موت دل کی تکلیف کی وجہ سے ھے۔

  29. 10 کلو وزن کم کرنے سے کولیسٹرول میں 20-30٪ کمی ھوتی ھے۔ اچھے کولیسٹرول میں بھی 8٪ کمی ھو جاتی ھے۔ 40٪ فالج کا خطرہ کم ھوتا ھے اور 50٪ دل فیل ھونے سے بچا رھتا ھے۔

  30. اچھی بات یہ ھے کہ پاکستان فی الحال 2009 کے ایک اندازے کے مطابق 14۔7 کلوگرام فی فرد گوشت خوری کر رھا ھے جبکہ امریکہ 120 کلو کے حساب سے پھلے نمبر پر ھے۔

  31. دیکھا گیا ہے کہ زیادہ تر دل کے دورے کا ٹایؑم صبح 4 بجے اور دن اتوار ھے۔

  32. دل کے خلیے چونکہ تقسیم نھیں ھوتے لھزا ان میں کینسر نھیں ھوتا۔

  33. یہ جھوٹ ھے کہ چھینک کے دوران دل آرام کرتا ھے۔

  34. -دل کے بڑھنے کی وجہ ھایؑ بلڈ پریشر ھے-

  35. دار چینی اینٹی کوگلوٹن ھونے کی وجہ سے دوران خون کو بھتر بناتی ھے۔  یہ کولیسٹرول کی سطح کو نارمل کرتی اور شریانوں میں خون جمنے سے روکتی ھے۔

  36. وٹامن ڈی کی وافر مقدار کھانے سے شریانوں کی تنگی کم ھوتی ھے یہ لچکدار رھتی ھیں اور فالج و دل کا دورہ کا خطرہ کم ھو جاتا ھے۔ جبکہ زایؑد مقدار کا کویؑ خاص منفی اثر نھیں ھوتا۔

  37. سگریٹ میں کاربن مونو اکسایؑڈ آکسیجن کو کم کرکے خون کی نالیوں کی دیواروں کو متاثر کرتی ھے۔ لھزا اومیگا-3 فیٹی ایسڈ لیں۔ سگریٹ میں پولی سایؑکلک ارومیٹک ہایڈروجن اور نایؑٹروسمایؑنز شامل ہوتے ہیں جو ایسی سوزش کا باعث بنتے ہیں جو جسم کا قدرتی مدافعتی نظام متاثر کرنے لگتے ہیں۔ نکوٹین خون میں جزب ہو کر ایڈرینالین کو تحریک دیتی ہے جس کے سبب دل کی دھڑکن تیز ھو جاتی ہے اور بلڈ پریشر بڑھنے لگتا ہے۔

  38. خون کی شریانوں میں سوزش سے شریانیں سکڑ جاتی ہیں۔ اس کی وجہ سگریٹ نوشی، وٹامن بی کی کمی، کمزور قوتِ مدافعت، جسمانی چوٹ، جراثیمی حملے، منشیات کا استعمال، پلیٹ لیٹس کی زیادتی اور غیر متوزن خوراک ھے۔

  39. ایک گلاس پانی میں 2 کھانے کے چمچ دھنیا کے بیج ابال لیں۔ شہد یا چینی ڈال کر جوشاندے کی طرح لیں۔ (علاج باالغزا UNESCO)

  40. ventricle دل کا سب سے مضبوط اور موٹا حصہ ہوتا ہے۔ کیونکہ یہ اوپر والے حصے کے مقابلے میں زیادہ دباؤ سے خون کو پمپ کرتا ہے۔

  41. دل کی کیؑ بیماریوں میں گردوں کی گارکردگی متاثر ہوتی ہے۔ اسکی وجہ بھی جدید سایؑنس ڈھونڈنے سے قاصر ہے۔

  42. حدیث: “نمک تمام سالنوں کا سردار ہے (ابن ماجہ)۔ اللہ تعالٰی نے آسمان سے زمین پر چار برکتیں نازل فرمایؑ ہیں۔ لوہا، آگ، پانی اور نمک” (البغوی فی التفسیر)۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ نمک کے اعتدال سے استعمال کرنے سے بلڈ پریشر نہں بڑھتا اگر باقی اعضاء درد کام کریں۔

  43. جو امریکی دوسرے گرم ملکوں پر قابض ہیں تو گرمی سے بچنے کے لیے آدھا ملی گرام روزانہ گولی کے زریعے نمک دیا جاتا ہے تاکہ سن سٹروک نہ ہو۔ مگر نمک زیادہ کھانے سے پیاس زیادہ لگتی ہے یا پانی کی کمی ہو سکتی ہے۔

  44. ڈاکٹر غزنوی کے مطابق کافی اور سیگریٹ کے استعمال سے بلڈ پریشر بڑھتا ہے۔ مزیر یہ کہ مانع حمل ادویات سے بھی بلڈ پریشر بڑھتا ہے۔ اسکے علاوہ موسم کی تبدیلی سے بھی اس میں فرق آتا ہے مگر یہ ہر شخص کے مزاج کے مطابق ہوتا ہے۔ لندن میں شہروں سے دور پرسکون علاقوں کے کراۓ شہروں سے دوگنا سے بھی زیادہ ہیں۔ مگر حیرت انگیز طور پر لاہور کے مصروف ترین علاقوں کے لوگوں میں بلڈپریشر گلبرگ، ڈیفنس، ماڈل ٹاؤن سے کم دیکھا گیا ہے۔ معدنیات کا استعمال خاص طور پر سنکھیا، پارہ، سیسہ، ہڑتال، سنگرف کے کشتے بھی بلڈ پرشیر بڑھا سکتے ہیں۔

  45. 1931 تک بلڈ پریشر کا ٹھیک سے علاج نہ تھا۔ یہ اعزاز ایک پاکستانی ساینس دان ڈاکٹر سلیم الزمان صدیقی کو حاصل ہے کہ انہوں نے اس بیماری کا جامع علاج دریافت کیا۔ ڈاکٹر صاحب جرمنی سے DSc کی ڈگری حاصل کرنے کے بعد حکیم اجمل خان کے دواخانہ اور طبیہ کالج نیؑ دہلی کے ساتھ وابستہ ہو گۓ۔ حکیم اجمل خان ہسٹریا، بلڈ پریشر کے مریضوں کو چھوٹی چندن اور فلفل سیاہ بڑی افادیت سے دیتے تھے۔ ڈاکٹر صاحب نے چھوٹی چندن کی جدید سایؑنسی بنیادوں پر کھوج کی مگر کویؑ چیز ھاتھ نہ آیؑ۔ حکیم اجمل خان نے ڈاکٹر صاحب کو اشارہ دیا کہ چھوٹی چند کھانے سے مریض کی گھبراہت دور ہوتی ہے اور وہ بے سکونی سے نجات پا کر آرام سے سوجاتا ہے۔ ڈاکٹر صاحب نے ان اشارات کو پاکر چندن کا کیمیایؑ تجزیہ کیا مگر پھر کویؑ چیز ھاتھ نہ آیؑ۔ ڈاکٹر صاحب نے ہندوستان کے مختلف علاقوں سے چندن کے پتے منگواۓ۔ آخر کار بڑی جدوجہد کے بعد جب صوبہ بہار کے مقدس مقام گیا سے چندن کے پتوں کو سایہ میں خشک کیا گیا تو مراد ھاتھ آگیؑ۔ ابتدایؑ تجزیہ سے alkaloids کے 19 کے قریب کیمیلز حاصل ہوۓ جن میں سے ایک کا نام ڈاکٹر صاحب نے اپنے محسن کے نام سے اجملین رکھ دیا۔ اسکی تفصیل وکی پیڈیا میں دیکھیں۔ (بشکریہ ڈاکٹر غزنوی) مزے کی بات ہے کہ دونوں جلیل قدر اصحاب کی موت دل کے دورے سے ہی ہویؑ اس لیۓ اپنے دل پر دھیان ابھی سے دیں۔

  46. آرام دہ زندگی گزارنے والوں کے شریانوں میں چربی (کولیسٹرول) جم جاتی ہے اور انکی لچک بھی کم ہو جاتی ہے۔ ویسے تو کولیسٹرول خون کا جزو ہی ہوتا ہے مگر زیادہ مقدار میں ہونے سے یہ شریانوں میں جمنے لگتا ہے۔

  47. حدیث: “تلبینہ دل کے جملہ مسایؑل کا حل ہے یہ ہر مریض کے دل سے گم کو اتار دیتا ہے”۔ (مسلم، بخاری) حضرت عایؑشہ بیان کرتی ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا “تلبینہ مریض کے دل کو آرام دیتا ہے، اسے چست بناتا ہے اور اسکے غم اور دکھ کو دور کرتا ہے”- تلبینہ بنانے کا طریقہ: جَو کا آٹا دو بڑے چمچ بھرے ہوئے’ ایک کپ تازہ پانی میں گھولیں برتن میں دو کپ پانی تیز گرم کریں۔ اس گرم پانی میں جَو کے آٹے کا گھولا ہوا کپ ڈال کر صرف پانچ منٹ ہلکی آنچ پر پکائیں اور ہلاتے رہیں پھر اتار کر اس کو ٹھنڈا کریں ہلکا گرم ہو تو اس میں شہد حسب ذائقہ مکس کریں اور پھر اسی میں دو کپ دودھ نیم گرم (یعنی پہلے سے ابال کر اس کو ہلکا نیم گرم کرلیا گیا ہو) ملا کر خوب مکس کریں۔ تلبینہ تیار ہے۔
    چمچ سے کھائیں یا گھونٹ گھونٹ پئیں یہ تیار مرکب اسی مقدار میں دو آدمیوں کیلئے کافی ہے۔ جب بھی استعمال کریں نیم گرم استعمال کریں۔ چاہیں تو ٹھنڈا بھی استعمال کرسکتے ہیں۔(چاہیں تو دن میں ایک ہی دفعہ بنا کر رکھ لیں بار بار بھی بناسکتے ہیں ہر بار تازہ بھی بناسکتے ہیں۔ لیکن اس کی مقدار ہر دفعہ یہی رہے گی۔

  48. گنٹھیا دل کا بدترین دشمن ہے۔ اسکے جراثیم اگر ایک بار جسم میں گھس جایں تو آسانی سے جان نہیں چھوڑتے۔ گلے کی سوزش والے جراثیم بھی آخر کار کافی عرصہ گزر جاۓ تو یہ دل کو اپنی زد میں لے لیتے ہیں جسکے نتیجے میں دل کے خانے اور والو endocarditis خراب کر کے عمر کا عزاب لگا دیتے ہیں۔ یہ جراثیم (بیکٹیریا، فنجی) منہ یا کسی بھی طرح خون میں شامل ہو کر اثر دیکھاتے ہیں۔

دل Heart

Courtesy of Vector Stock

گھریلو ٹوٹکے

ہمارے جنسی رویؑے کیسے ہیں یہاں کلک کریں۔

  1. ضعف دل و دماغ کے لیے بھترین نسخوں میں سے ھے۔ اسکی عمدگی اسکے اجزاء سے ظاھر ھے- کشتہ عقیق، کشتہ مرجان، کشتہ سنگ یشب ھر ایک 1 تولہ، ورق نقرہ 6 ماشہ، ورق طلاء15 عدد، روح کیوڑہ، روح گلاب، روح بید مشک، روح گاؤزبان ھر ایک 2 تولہ سب ادویا کو ملا کر خوب کھرل کریں۔ مقدار خوراک 2 رتی ھمراہ مکھن روزانہ، دودھ زیادہ سے زیادہ پیؑں۔ (از کنزالمرکبات)

  2. جواھر مھرہ: زھر مھرہ خطایؑ پونے 2 تولہ، مروارید، بسد، کھربا، لاجورد مغسول، یاقوت سرخ، یاقوت کبود، یاقوت زرد، یشب سبز، زمرداخضر، عقیق سرخ، ورق نقرہ، مصطلگی رومی، ھر ایک 7-7 ماشہ۔ تمام ادویات کو پختہ کھرل میں ڈال کر ایک ھفتہ تک متواتر روح کیوڑہ پھر ایک ھفتہ روح گلاب میں کھرل کریں۔ تاکہ غبارکی طرح باریک ھو جایؑں۔ دوا تیار ھے۔ 2-4 چاول خمیرہ گاؤزبان یا خمیرہ مروارید میں رکھ کر کھلایؑں اور اوپر سے شربت صندل یا گاۓ کا دودھ دیں۔ دل کی کمزوری دور کرنے کے لیے انتھایؑ اور آخری چیز ھے۔ اسکی محض ایک ھی خوراک سے مریض قلب کو نفع معلوم ھونے لگتا ھے۔ سست و ناکارہ دل کا مریض اسکا استعمال کرنے کے بعد ھشاش بشاش و چشت و چوبند ھو جاتا ھے۔ (بشکریہ کنزالمرکبات)

  3. کچھ خمیراجات ایسے ھیں کہ جنکو بازار سے خرید کر استعمال کرنا ھی بھتر ھے کونکہ انکو بنانا بھت مشکل ھوتا ھے۔ ان خمیروں کے اپنے اپنے فوایؑد ھے مگر سب ھی اعضاء ریؑسہ (دل، جگر، دماغ) کے لیے اکیسر سے کم نیھں ھیں۔ درج زیل خمیرے یہ ھیں۔ خمیرہ ابریشم، خمیرہ ابریسم عناب والا، خمیرہ ابریشم حکیم ارشد والا، خمیرہ ابریشم مصطلگی والا، خمیرہ گاؤزبان سادہ، خمیرہ گاؤزبان عنبری، خمیرہ گاؤزبان عنبری جدوار عود صلیب والا، خمیرہ گاؤزبان جواھر والا، خمیرہ مرجان جواھر والا، خمیرہ مروارید، خمیرہ مروارید بہ نسخہ خاص، خمیرہ مروارید مختصر، خمیرہ یاقوت، خمیرہ زمرد، خمیرہ زھر مھرہ، خمیرہ صندل سادہ، خمیرہ عنبر- تمام خمیروں کے نسخاجات کتاب کنزالمرکبات میں درج ھیں۔ (بشکریہ کنزالمرکبات)

  4. آرد گندم  آدھ کلو  آرد نخود آدھ کلو گائےکے گھی آدھ کلو میں بریاں کریں۔ دارچینی 6 گرام بہمن سفید 6 گرام بہمن سرخ 5 گرام دانہ الائچی کلاں 5 گرام زنجیل 5 گرام مشک خالص 3 گرام مغز پستہ 25 گرام مغز بادام 25 گرام مغز فندق 24 گرام مغز نارجیل 24 گرام مغز چلغوزہ 24 گرام نبات سفید ڈیڈھ کلو شہد آدھ کلو کا قوام کر کے حلوہ بنائیں۔ 20 گرام صبح اور20 گرام شام کو کھائیں دودھ کے ساتھ انشاءاللہ  دل دماغ و جگر کو طاقت ملے گی 40 روز یت یہ نسخہ کریں۔ (بشکریہ اٗم الشفا ہربل فارما)

  5. بارش کا پانی لےکر 70 مرتبہ سورۂ فاتحہ ، 70مرتبہ آیت الکرسی  اور70،70مرتبہ چاروں قل پڑھ کردم کریں دنیا کے ایسے مریض جو لاعلاج ہو چکے ہیں۔اسے دم کرکے پلائیں اللہ کے فضل سے مریض ایسے ٹھیک ہوتا ہے جسکا گمان نہیںہوتا ۔اگر بارش کا پانی مزید نہ ملے تو سادہ پانی ملا کر بڑھا تے رہیں ۔چند دن یا زیادہ عرصہ مریض کو استعمال کروائیں۔ (عبقری)

  6. بلڈپریشر کم کرنے کے لیے ملٹھی (چھلکا اتار کر)، منقی، عناب، گل گاؤ زبان ہر ایک 25 گرام۔ پرسیاؤشان، گل غافث ہر ایک 27 گرام، مصطگی رومی 17 گرام، تمام ادویات کو پیس کر رات بھر سوا چھ لٹر پانی میں بھگو دیں۔ صبح اسی پانی میں جوش دے کر چھان لیں۔ اس میں عصارہ سیب شیریں چوتھایؑ لٹر ملا کر پاؤ چینی ڈال کر شربت تیار کریں۔ ایک چوتھایؑ شربت ڈال کر تازہ پانی ڈال کر صبح شام پلایں۔ (ڈاکٹر غزنوی)

  7. بلڈ پریشر کم کرنے کیلۓ: مریض کو پرسکون رکھیں۔ ضعف قلب اور کمزوری کی وجہ سے ہو تو تخم ریحان 1 تولہ رات گلاب 5 تولہ میں بھگو کر شبنم میں آسمان کے نیچے کھلا ریکھیں۔ صبح کو مصری 2 تولہ ملا کر پلایں۔ یا گل گڑھل 7 عدد کی سبزی دور کر کے رات کو گلاب 10 تولہ میں بھگو کر شبنم میں رکھیں۔ صبح کو چھان کر مصری 2 تولہ ملا کر پلایں۔ (حاذق)

صرف عورتوں میں ہونے والے کینسرز

 

اپنے طرز معاشرت Lifestyle کو بدلیں

اب اپریشن کروانے کی ضرورت نھیں – 10 نکاتی پروگرام

  1. روزانہ آدھا گھنٹہ صبح شام سیر کریں یہ اکسیر ٹانک ھے۔ 1 چمچ شھد پانی میں ڈال کر پیؑں۔ کھلی ھوا اور پارک کے درختوں کو محسوس کریں اور فکر ادھر چھوڑ دیں۔ پرانی یادیں تازہ کریں پرانی تصاویر دیکھیں۔

  2. اگر ڈاکٹر اجازت دے تو ھلکی پھلکی ورزش کریں۔ تاکہ بڑھے ھوۓ وزن میں کمی ھو جاۓ۔ اپنا وزن بی ایم آیؑ کے مطابق کر لیں۔

  3. چکنایؑ، چربی، گھی، چینی، نمک ، انڈا، 30 گرام (3 چمچ) سے زیادہ نہ ھو۔ زیادہ بالکل نہ کھایں۔ آج تک کوؑی صاف ستھرے کم کھانے سے نھیں مرا۔

  4. کھانے میں سبزیوں اور پھلوں کا استعمال بڑھا دیں۔ ضروری وٹامن ضرور لیں۔

  5. شوگر اور بلڈپریشر کو نارمل رکھیں۔

  6. تمباکو نوشی، شراب نوشی چھوڑ دیں یا پھر ساتھ میں اومیگا-3 کا استعمال برھا دیں۔

  7. بند شریانوں کو کھولنے کے لیے ارجن کا خشک چھلکے کو پیس کر 2 کپ پانی میں پکا لیں جب 1 کپ رہ جاۓ تو شھد ڈال کر 2-3 ھفتے پی لیں۔

  8. سادہ، پرسکون اور مطمؑن زندگی گزاریں خالق کی عبادت کریں اور مخلوق کو خوش رکھیں۔ دماغی بوجھ، لالچ، زھنی پریشانی، زیادہ بھاگ دوڑ سے بچیں-

  9. وقتاؑ فوقتاؑ معالج سے معایؑنہ کروایں اور ھدایات پر مکمل عمل کریں۔ جنکو موروثی دل کا عارضہ ھے وہ اپنا نارمل چیک اپ کرواتے رھا کریں۔

  10. چھٹی کے دن خوب آرام کریں اور بچوں کو ٹاؑم دیں۔ مھینہ میں 3 دن روزہ رکھیں۔

طبیب کے متعلق چند ضروری ہدایات

مریض کے متعلق چند ضروری ہدایات

خفقان قلب (Palpitation)

اس میں دل کی دھڑکن بے ترتیب، تیز اور قوی ہو جاتی ہے۔ ایک صحت مند آدمی دھڑکن 60 سے 100 فی منٹ کے درمیان ہوتی ہے۔ اگر 100 سے اوپر ہو تو اسے دل کا پھڑکنا Tachycardia کہتے ہیں۔ اگر دھڑکن بے ترتیب ہو تو اسے palpitation یا حفقان کہتے ہیں۔

وجوھات: پریشانی، صدمہ، ڈر، کولیسٹرول، تھایؑرایؑڈ ھارمون میں اضافہ، دل کا سخت ہونا، دل کا تیز چلنا، آکسیجن کی کمی اور کاربن ڈایؑ آکسایؑڈ کی زیادتی، دمہ، پھیپھڑوں کی کمزوری، گردوں کی بیماری، خون و فولاد کی کمی، انٹی ڈپریشن ادویات، تمباکو و شراب نوشی، کیفین، نشہ آور، کیلشیم پوٹاشیم اور میگنیشیم کع وجہ سے الیکٹرولایؑٹ میں عدم توازن، لو بلڈ شوگر، انٹی ہستامن ادویات، خون کے سرخ زرات میں کمی، دل کے والو کی کمزوری، حمل، گیس، قبض، فساد خون. نظریہ مفرد اعضاء کے مطابق یہ غدی عضلاتی مرض ہے۔

علامات: سر چکرانا، چھوٹے سانس، پسینہ، سردرد، سینے میں درد۔

تشخیص: ای سی جی کروایں۔ تھایؑرایؑڈ کیلۓ خون کا معایؑنہ کروایں۔ مفرد اعضاء کے تحت جسم کے مزاج کو سمجھنے کے بعد تشخیص و علاج میں آسانی واقع ہو جاتی ہے۔

علاج با سبب علامات

  • اگر دھڑکن تیز، بےترتیب اور ساتھ سینے میں درد ہو تو دماغی قوت کا علاج کریں۔
  • بعض اوقات خون کی زیادتی سے بھی ہوتا ہے اور اس میں علامات نیند کا زیادہ آنا، سستی، نبض قوی و عظیمم، شامل ہیں۔
  • اگر شور سے ہو تو ضعف دل کا علاج کریں۔ اسکے علاوہ بعض اوقات صدمہ سے دل ڈوبنا دل کے والو بند ہونے کی علامات ہوا کرتی ہے۔
  • اگر چلنے پھرنے سے سانس پھولے اور ھاضمہ خراب ہو تو ٖحفقان کے ساتھ ساتھ ھاضمہ اور خون کی کمی کا بھی علاج کریں۔ دیگر ھاضمہ خراب ہونے کی علامات میں آنکھوں میں جلن، گرم جسم، قبض، گیس شامل ہیں۔ تو ھاضمہ کا علاج کریں۔ کھانے کے بعد بھی اگر دل کی دھڑکن بڑھ جاۓ تو ھاضمہ خراب ہو گا۔
  • اگر حفقان کے ساتھ پیاس، بے چینی، منہ کڑوا، نیند میں کمی ہو تو صفراء زیادہ ہو گا۔
  • اگر نبض سست، دل مدھم، گرم چیزیں فایؑدہ کریں، پیاس کم لگے۔ یہ نشانی سرد مزاج کی علامت ہے۔
  • اگر سانس میں تنگی، دل ڈوبنا، پیشاب سفید اور نبض میں لیونت کی وجہ سے دل کی دھڑکن بے ترتیب ہو تو وجہ بلغم کی زیادتی ہے۔
  • سوداوی حفقان میں فاسد خیالات، پریشان، مغموم، فکر و غم، خشک کھانسی، پیشاب غلیظ ہوتا ہے۔ لہزا سودا کا علاج کریں۔
  • اگر کثرت جماع کی وجہ سے ہو تو وجہ ضعفِ قلب ہو گی۔
  • عورتوں میں حفقان رحم کے ورم کی وجہ سے بھی ہوتا ہے۔ آتشک اور سوزاک میں بھی وجہ ضعفِ قلب ھی ہوتی ہے۔ اگر عورتوں میں دم گھٹے، پیسنہ زیادہ، سخت کبھراہٹ ہو تو کیلشیم کی کمی ہو گی۔
  • اگر حفقانِ قلب مقویات و مفرحات سے نہ جاۓ تو ریح البواسیر کا علاج کریں۔ اگر پھر بھی افاقہ نہ ہو تو کرم شکن ادویات دیں۔
  • اگر ٹھنڈا پانی پینے سے ہو تو ضعفِ قلب و اعصاب کی علامت ہے۔
  • اگرقلب کی وجہ سے ہو تو عورتوں میں دل کے فعل کی خرابی وجہ ہوتی ہے اور اچانک ہونے لگتا ہے ساتھ میں دل کی دھڑکن شدید نہیں ہوتی۔ چہرہ پھیکا، پاؤں پر ورم، بایؑں پسلی میں خفیف درد ہوتا ہے۔ چہل قدمی سے فایؑدہ ہوتا ہے اور آرام کرنے سے دل دھڑکنے لگتا ہے۔ مقویاتِ و محرکیاتِ قلب سے فایؑدہ جبکہ مسکن سے نقصان ہوتا ہے۔ جبکہ اسکے برعکس مردوں میں دل کی ساخت کی خرابی وجہ ہوتی ہے اور آہستہ بڑھتا ہے۔ ساتھ میں دھڑکن شدید نہیں ہوتی۔ چہرہ نیلگو، پاؤں پر ورم نہیں ہوتا، قبل کے مقام کو ٹھوکنے سے آواز سنایؑ دیتی ہے۔ آرام کی حالت میں سکون ملتا ہے جبکہ چلنے پھرنے سے دھڑکنے لگتا ہے۔ مقویاتِ و محرکیاتِ قلب سے نقصان جبکہ مسکن سے فایؑدہ ہوتا ہے۔ اگر اختلاج قلب (heat sick) میں دم گھٹنے لگے اور مریض سے بولا بھی نہ جاۓ تو دل کے اعصاب کمزور ہوں گے۔
  • اگر گلہڑ goiter کی بیماری ہو گی تو بھی اس سے دھڑکن بے ترتیب ہوتی ہے۔
  • اگر خفقان شدید محنت، ورزش یا گھنٹیا کے اسباب کی وجہ سے ہو تو قلب میں وزن کا احساس، گردن اور کنپٹی کی رگوں میں تڑپ کا احساس ہوتا ہے۔ نیز غصہ، ایک دم کھڑے ہونے سے بھی خفقان ہونے کی وجہ یہی اسباب ہوتے ہیں۔ اگر صرف گردن کی وریدیں تڑپتی دیکھایؑ دیں تو یہ atria یا ازنین کی وجہ سے ہوں گی۔
  • اگر numbness کہنی تک محدود ہو تو دل کے دوسری جانب کے بطن ventricle کے پھیلنے سے ہوتا ہے۔
  • اگر فالج کا حملہ قلب پر ہو جاۓ تو دل فیل ہو جاۓ گا۔ تپ محرقہ typhoid کے غلط علاج سے بھی دل فیل ہو سکتا ہے۔
  • خمیرہ مروارید: دل کی پھڑپھڑاہٹ و گبھراہٹ دور کرنے کے لیے بے مثال شے ہے۔ دماغ کو بھی طاقت دیتا ہے۔ اسکے استعمال سے چند ہی روز میں نقاؑیص دور ہو جاتے ہیں۔ کثرت محنت دماغی کی وجہ سے ضعف دماغ لاحق ہو گیا ہو۔ کثرت غلط کاری کی وجہ سے دل و دماغ ماؤف ہو گۓ ہوں۔ عورتوں کی بیماریوں میں بھی مفید ہے۔ مروارید ناسفتہ، بنسلوچن سفید ہر ایک دو تولہ۔ عنبر اشہب 1 تولہ، گلاب و بید مشک ہر ایک 1-1 سیر، چینی و شہید آدھا آدھا سیر، سب چیزوں کو علیحدہ علیحدہ گلاب و بید مشک میں کھرل کریں پھر چینی اور شہد کا قوام بنا کر سب چیزیں اس میں ڈال کر اس قدر گھوٹیں کہ سفید خمیرہ بن جاۓ۔ مقدار خوراک 3 ماشہ سے 6 ماشہ صبح شام عرق گاؤزبان 12 تولہ کے ساتھ استعمال کریں۔ (کنزالمرکبات)
  • خمیرہ مروارید مختصر: مروارید ناسفتہ، بنسلوچن سفید، صندل سفید، ہر ایک 2 تولہ، عنبر اشہب 1 تولہ، چینی سواسیر، گلاب 1 سیر، عرق بید مشک 1 سیر، شہد 1 سیر- بدستور خمیرہ تیار کریں۔ جو فایؑدے اوپر والے خمیرے کے ہیں وہی اسکے ہیں۔ (کنزالمرکبات)

 

دل کے پٹھوں کی کمزوری Cardiomyopathy

اس مرض میں دل کے پٹھے یا ٹشوز (بافتیں) کمزور ہو جاتی ہیں ان پٹھوں یا عضلات کو انگریزی میں myocardium  کہتے ہیں۔ پٹھے کمزور ہونے سے دل بھی کمزور ہو جاتا ہے جسکی وجہ سے دل کے خانے بھی بڑے ہو جاتے ہیں۔ اسکا نتیجہ یہ نکلتا ہے کہ دل خون کو صیح پمپ نہیں کر پاتا۔ سب سے اہم وہ ادویات ہیں جو دل کے پٹھوں کو طاقت دیتی ہیں مگر اس مرض کی انگریزی ادویات یا تو بہت کم ہیں اور اگر ہیں بھی تو انکے فایؑدے کم ہیں۔ جبکہ انکے سایؑڈ افیکٹ بھی ہیں۔ مثال کے طور پر ایڈرینالین ھارمون کو جسم (ایڈرینل گلینڈ) خود پیدا کرتا ہے۔ جبکہ انگریزی ادویات میں اسکا انجیکشن لگا دیا جاتا ہے۔ اگر ہم Cardiomyopathy کی بات کریں تو اسکو بھی آگے 4 اقسام ہیں۔

  1. Hypertrophic cardiomyopathy اسکے بارے خیال کیا جاتا ہے کہ یہ ایک موروثی یا جینیٹک مرض ہے جس میں دل کی دیواریں موٹی ہو جاتی ہیں۔ گاہے یہ مرض بلد بلڈ پریشر اور عمر کے ساتھ ساتھ بھی ہو جاتا ہے۔ زیابیطیس اور تھایؑرایؑڈ کی وجہ سے بھی یہ مرض ہو جاتا ہے۔ یہ سب سے عام قسم ہے۔

  2. ARVD اس مرض میں اچانک موت واقع ہو جاتی ہے جو کہ نوجوان کھلاڑیوں میں ہوتا ہے۔ مگر یہ بہت کم ہونے والا مرض ہے۔ اس مرض میں اچانک دایؑں وینٹریکل میں جربی یا ليفی fibrous جمع ہو کر دل کی دھڑکن میں خلل ڈال دیتے ہیں۔

  3. Restrictive cardiomyopathy بہت کم ہوتا ہے۔ یہ بھی ونٹریکل کی سختی کو وجہ سے ہوتا ہے۔

  4. دل کے پٹھوں کی کمزوری کے نتیجے میں دل کے برقی نظام میں بے قاعدگی آنے سے دھڑکنیں بے قاعدہ ہو جاتی ہیں۔ اس سے دل کے سکڑنے اور پھیلنے کا عمل متاثر ہر کر دل کا دورہ پڑ جاتا ہے۔ ایسے مریض کو فوراً ہسپتال لے جایں۔

  5. Alcoholic cardiomyopathy جیسا کہ نام سے ظاہر ہے کہ کثرت شراب نوشی کی وجہ سے یہ مرض ہوتا ہے۔ اس میں دل بڑا ہو جاتا ہے۔

علامات: بے ترتیب دھڑکن، دل کا فیل ہونا، والو کمزور ہونا، تھکاوٹ و کمزوری، چھوٹے سانس، سانس میں دشوری، سینہ میں درد، چکر آنا، چھاتی پر بوجھ، دل پھڑکنا، چہرہ زرد ہو جانا، ٹانگوں اور گھٹنوں میں سوجن، ھایؑ بلڈ پریشر۔ علامت کے مطابق شدید acute اور مزمن chronic  سوزش ہو سکتی ہے۔

اسباب – کن لوگوں کو ہو سکتا ہے؟ یہ کسی بھی عمر میں ہو سکتا ہے۔ دیگر اسباب میں موروثی، آتشک، خسرہ نمونیہ، خناق کے جراثیم اور انکے زہر toxins، شریانوں کی تنگی، زیابیطیس، موٹاپا، ھارٹ اٹیک، شراب نوشی، بلند فشار خون، دل کے کسی حصے میں سوزش، فولاد کی کثرت، بعض طفیلیے parasites، جوڑوں کے درد کی ادویات خاص طور پر کارٹی سون، جسم کے دیگر اعصابی نقایؑص۔ خناق میں دل کے بے قایؑدگی زیادہ شدید ہوتی ہے۔ ایام حمل کے دوران بھی دل کے عضلات پھیل جاتے ہیں۔

تشخیص: ECG، BIOPSY سے تشخیص ہو جاتی ہے۔ البتہ اس مرض کے لیے کوؑی لیبارٹری ٹیسٹ میسر نہیں ہے۔

علاج: ویسے تو جسم میں سب سے مضبوط عضلات دل کے ہی ہوتے ہیں۔ دل کے پٹھوں کو مضبوط کرنے والی اور پیشاب لانے والی ادویات کا استعمال کروایں۔ پیشاب آور ادویات سے بلند فشار خون بھی کم ہوتا ہے۔ مریض کو آرام کروایں کیونکہ بھاگ دوڑ سے دل کو زیادہ کام کرنا پڑتا ہے۔

غزا و پرہیز: شروع شروع میں لوگوں نے ٹیسٹوسٹرون نامی ھارمون کے انجیکشن لگواۓ جو کہ فایؑدے دینے کی بجاۓ نقصان کا باعث بنے۔ ان میں سے زیادہ تر لوگ حرکت قلب بند ہونے سے انتقال کر گۓ۔ اسی طرح ویاگرا نامی دوا جو کہ حادثاتی طور پر دل کر شریانوں کے لیے بنایؑ گیؑ تھی وہ بھی جنسی طاقت کے لیے موؑثر ثابت ہویؑ مگر اسکو استعمال کرنے والے بھی دل کے اٹیک سے مر گۓ۔ کیونکہ ان ٹیکوں سے جگر کا SGPT بڑھ گۓ جو دل کے دورے کا باعث بنے۔

علاج

  1. اگر فولاد کی زیادتی haemochromatosis کی وجہ سے عضلات کمزور ہو جایں تو معجون دبیدالورد کھلا کر اوپر سے عرق بونجاسف 50 ملی لٹر اور عرق مکو 50 ملی لٹر کو شربت بزوری معتدل 25 ملی لٹر کے ساتھ پلایں۔ اسکے علاوہ درج زیل نسخہ آزمایں۔ اسطوخودوس، بسفایؑج، بادیان، بادرنجبویہ، مکو، شاہترہ، پوست بیخ بادیان ہر ایک 7 گرام، افیون 3 گرام، انجیر زرد 3 گرام، منقٰی بغیر بیج 25 گرام، سب چیزوں کو رات آدھا لیٹر پانی میں بھگو دیں۔ صبح مل کر جوش دیں۔ چھان کر 48 گرام گلقند ملا کر ایک ہفتہ کھلایں۔ آٹھویں روز اس میں سنامکی 12 گرام، تربد ریوند خطایؑ 5-5 گرام، زنجیل 2 گرام، ہلیلہ سیاہ 12 گرام، مغز خیارشبز 60 گرام، ترنجین 48 گرام، شربت دینار 25 ملی لیٹر، شیرہ مغز بادام 5 عدد کا اضافہ کریں۔ غزایں: تیتر، بٹیر، تازہ مچھلی کا شوربہ، حریرے، پرندوں گا گوشت۔ بدن پر زیتون کی مالش کریں۔ گرم پانی سے غسل کریں۔ (کتاب: دل کی بیماریاں اور جدید سایؑنس)۔

  2. جو کا دلیہ شہد ملا کر دیں۔ یہ سنت نبوی ﷺ بھی ہے۔

  3. حدیث ہے کہ ” جس نے صبح کے وقت عجوہ کھجور کے سات دانے کھاۓ اس روز اسکو زہر اور جادو سے بھی نقصان نہیں ہو گا”

  4. ایک ایسا بھی دل کا مریض دیکھا گیا ہے کہ جس کو ڈاکٹر نے پہستال داخل ہو کر انگریزی ادویات کھانے کا مشورہ دیا۔ مریض انگریزی ادویات سے نفرت کرتا تھا لہزا گھر آ کر ایک ہفتہ مکمل آرام کیا اور ساتھ ھی صبح ناشرہ میں جو کا دلیہ شہد ڈال کر متواتر دیا گیا اور شام کو شہد اور کھجوریں دی گیؑ۔ تقریباً ایک سال کے بعد وہ مریض دل کے عارضے سے شفایاب ہو گیا۔ (ڈاکٹر غزنوی)

 

دل کا درد Angina

حکیم آجمل خان کی مایہ ناز کتاب حاذق میں لکھا ہے کہ انجایؑنا کی صورت میں چھاتی میں شدید درد یا دباؤ آ جاتا ہے اور اسکی وجہ دل کے پٹھوں کو آکسیجن نہ ملنا ہے۔ مریض اس درد کو برداشت نہیں کر سکتا اور دم گھٹنا شروع ہو جاتا ہے۔ اسکو دل کے اٹیک سے الگ تناظر میں دیکھنا چاۓ کیونکہ دل کا اٹیک زیادہ شدید ہوتا ہے جس میں مہلت کم ملتی ہے۔ کیونکہ انجایؑنا میں بچ جانے کی شرح 92٪ ہے۔

علامات: دل کو آکسیجن نہ ملنے یا کم ملنے کی بہت ساری وجوھات ہو سکتی ہیں مثلاً شریانوں میں رکاوٹ، یہی علامات اسباب میں بھی آتی ہیں۔ دیگر علامات میں 15 منٹ سے زایؑد تکلیف رہنا، چھاتی پر دباؤ یا بوجھ یا سختی یا دم گھٹنا یا گرمایؑش کا احساس شامل ہیں۔ اس میں بعض اوقات لگتا ہے کہ کو دل کو یا چھاتی کو کس کر پکڑ رھا ہو اسکی وجہ زہنی یا جزباتی بھی ہو سکتی ہے۔

اسباب: خون کی نالیوں کی تنگی جو کہ کولیسٹرول کی وجہ سے ہوتی ہے۔ خون کی بہت کمی، دلے کی بے ترتیب دھڑکن، ھارٹ فیل ہونا، عمر رسیدگی، بلڈ پریشر، سردی لگنا، خون میں ضروری رطوبات کی بہت کمی یا زیادتی، سیگریٹ نوشی، زیابیطیس، موروثی، کولیسٹرول، گردوں کے امراض، موٹاپا، آرام طلبی، شوروغوغا سے گبھرانا، سماجی پریشانیاں۔

علاج

ادرک، لہسن، لیموں، کا رس اور سیب کا سرکہ ہر ایک 1 کپ، شہد 2 کپ، شہد کے علاوہ ہر چیز کا پانی ہلکی آنچ پر 30 منٹ تک پکایں۔ ٹھنڈا کر کے شہد ملایں اور صاف بوتل میں بھر کر فریض میں رکھ لیں۔ مقدار خوراک: 1 چمچ صبح شام خالی پیٹ۔

ایک ماشہ سفوف کیپسول میں بھر کر صبح شام استعمال کریں۔

جواہر مہرہ 32 گرام کو خمیرہ گاؤزبان عنبری جواہر والا 5 گرام میں ملا کر عرق بید مشک، عرق گلاب، عرق عنبر ہر ایک 5 ملی لیٹر میں ملایں پھر شربت انار شیریں 50 ملی لیٹر میں ملا کر دن میں تھوڑا ٹھوڑا بار بار دیا جاۓ (ڈاکٹر غزنوی)

بند شریانیں کھولیں Arterial Plaque

اسکو دل کی کارونری بیماری coronary thrombosis بھی کہتے ہیں جس میں دل کی شریانیں خون کے لوٹھڑوں blood clots کی وجہ سے  تنگ ہو جاتی ہیں۔ اسکے بےشمار اسباب ہیں جن میں سے چند ایک نیچے دیے گۓ ہیں۔ چارلس ڈارون بھی اسی مرض سے مرا تھا۔ پلانیٹ ڈرگ ڈایؑریکٹ کے مطابق ہر سال 7 لاکھ لوگوں کو یہ مرض ہوتا ہے جن میں سے 15٪ لوگوں کو جان لیوا دل کا دورہ myocardial infarction پڑتا ہے۔

اسباب: سب سے بنیادی وجہ تو کولیسٹرول نامی جربی کی زیادتی ہے جو شریانوں میں جم جاتی ہے۔ قوت مدافعت اسی وقت خون کے سفید خلیوں کو حکم بھیجتا ہے تاکہ کولیسٹرول ختم ہو سکے۔ دیگر اسباب میں موروثی، آرام طلبی، تمباکو و شراب نوشی، چکنایؑوں کی کثرت، ھاؑی بلڈ پریشر، شدید نمونیہ، بڑھتی عمر شامل ہیں۔

تشخیص: مریض کو کھڑے سایکل پر پیڈل مارنے کو کہیں۔ اگر ایکوکارڈیوگرام نارمل آۓ تو سمجھیں کہ دل و شریانیں نارمل ہیں۔ ابھی بی ایسے مسند تشخیصی آلے کی ضرورت ہے جس کی مدد سے شریانوں کی تنگی ناپی جا سکے۔ زیادہ تر درد کی صورت میں ہی تشخیص ہوتی ہے جو کہ جان لیوا ہو سکتا ہے۔ تاہم Ankle Brachial Index کے زرییے بند شریانوں کا پتہ چلایا جا سکتا ہے۔

علامات: ریڈر ڈایؑجسٹ کے مطابق تین علامات سے بھی شریانیں تنگ ہوسکتی ہیں۔ گنج پن، نامردی، پنڈلی کا درد۔ یاد رکھیں شریانیں بند ہو ریی ہوں اسکا پتہ نہیں چلتا۔ دیگر علامات میں سینے میں درد، تنفس کا مختصر ہونا، انجایؑنہ کا درد، اکثر مریضوں کو اس وقت پتا چلتا ہے جب شریانیں مکمل طور پر بند ہو چکی ہوتی ہیں اور آخر کار دل کا اٹیک myocardial infarction ہوتا ہے۔

غزا و پرییز: ورزش، واک، یوگا اور غزا سے کولیسٹرول ختم کرنے سے پرانی رکاوٹ ختم نہیں ہوتی البتہ نؑی نہیں بنتی۔ اسکے علاوہ تمباکو و شراب نوشی، بیکری کی اشیاء، چینی و چکنایؑاں، آیس کریم، حلوہ پوری، پاۓ، میٹھاؑی،وغیرہ سے مکمل پرہیز کریں۔ اسکے علاوہ جو چیزیں کھا سکتے ہیں ان میں زیتوں کا تیل، مچھلی، خشک میوہ جات، فایؑبر وغیرہ زیادہ کھایں۔

علاج

جن لوگوں کو ایک دفعہ دل کا دورہ پڑ چکا ہو انکو ساری زندگی انگریزی ادویات دے جاتی ہیں انکی بجاۓ دیسی ایورویدک ادویات دی جانی چایے۔
  1. ادرک، لہسن، لیموں، کا رس اور سیب کا سرکہ ہر ایک 1 کپ، شہد 2 کپ، شہد کے علاوہ ہر چیز کا پانی ہلکی آنچ پر 30 منٹ تک پکایں۔ ٹھنڈا کر کے شہد ملایں اور صاف بوتل میں بھر کر فریض میں رکھ لیں۔ مقدار خوراک: 1 چمچ صبح شام خالی پیٹ۔

  2. آدھا چاۓ کا چمچ کمرکس، ایک پان پتہ، ایک چھوٹی ادرک، اور 3 پودینے کی ڈندیاں سب کو ابال لیں۔ تقریباً آدھا کپ بن جاۓ۔ روزانہ رات کے کھانے کے بعد پلایں۔ دل کے دیگر امراض کے لیے بھی مفید ہے۔ جنکو مسؑلہ نہیں ہے وہ بھی پی سکتے ہیں۔

  3. جن لوگوں کو ابی سے دل کا عارضہ لاحق نہیں ہوتا مگر خاندانی یا موروثی طور پر یہ مرض ہے تو انکو ہفتے میں 1 بار ارجن کی خشک چھال پسی ہویؑ ایک چمچ کو ڈیڑھ کپ پانی میں ابال لیں جب 1 کپ رہ جاۓ تو پینا چایۓ۔ ارجن دل کی شریانوں کے تمام امراض میں مفید ہے۔

 

دل کے بند والو

پلمونری والو اور مایؑٹرل والو کو بغیر اپریشن بھی تنگ ہونے کے بعد چوڑا کیا جا سکتا ہے۔ جبکہ تبدیل کرنے کے لیے اپریشن کی ضرورت پڑتی ہے۔ مصنوعی والو لگانا آسان ہے اور یہ کام بھی ٹھیک کرتا ہے مگر اس سے آواز آتی ہے۔ اور ساتھ لوٹھڑے نہ بننے کی ادویات کھانی پڑتی ہیں تاکہ مصنوعی والو پر لوٹھڑا جم نہ جاۓ۔

بعض اوقات والو سخت یا تنگ ہونے کی وجہ سے پوری طرح نہیں کھلتے۔ جسکی وجہ سے دل کو کافی محنت سے خون پمپ کرنا پڑتا ہے۔ اس سے دل فیل بھی ہو سکتا ہے۔ سارے چاروں والو بھی سخت یا تنگ ہو سکتے ہیں۔

بعض اوقات والو پوری طرح بند ہیں ہوتے اسکو لیکی والو leaky valve بھی کہتے ہیں۔ اس سے بھی دل پر دباؤ پڑتا رہتا ہے اور مناسب مقدار میں خون جسم کو نہیں پہنچ پاتا۔

اسباب: بعض جراثیم خون میں شامل کو کر والو کو خراب کرتے ہیں اس بیماری کو Endocarditis کہتے ہیں۔

علاج

  1. عبقری کے اس مختصر لیکن بااثر ٹوٹکے نے جہاں اور بے شمار کمالات دکھائے وہاں اس سلسلے میں تجربات کے بعد شفایاب ہونے والوں کی تعداد بھی سیکڑوں میں ہے۔ السی کا تیل 10قطرے لسی میں ڈال کر صبح و شام پی لیں۔ اسکے دیگر فواید میں جوڑوں کے پرانے اور لاعلاج درد کیلئے کچھ ماہ‘ پٹھوں کے کھچائو اور اینٹھن کیلئے کمر کے درد‘ دماغی اعصابی کمزوری کیلئے قوت خاص کی کمزوری کیلئے‘ فالج لقوہ کسی عضو کا خشک یا کمزور ہونے کیلئے بھی بہت موثر ہے۔ یہ بلڈ پریشر اور کولیسٹرول کو ختم کرتا ہے‘ نالی بلاک ہے تو کھول دیتا ہے۔ دل کے والو کھولتا ہے۔ چھاتی کے کینسر، شوگر اور دمہ کے لیے بھی مفید ہے۔ السی کے تیل میں اومیگا 3 اور زنک ہوتے ہین جو دل کے لیے بہت مفید ہین۔ تاہم اسکا زیادہ مقدار میں استعمال اور گرم کرنا نقصان دیتا ہے۔ السی کے پتے: السی کے پتوں کا استعمال میڈیکل سائنس میں کسی بھی جگہ سود مند ثابت نہیں ہوا۔ (بشکریہ عبقری)

  2. ہر نماز میں فرض نماز کا سلام پھیرنے کے بعد اپنا دائیاں ہاتھ دل پر رکھیں اور اول و آخر درود شریف جو بھی یاد ہو اور درمیان میں سات مرتبہ ”یَاقَوِیُّ القَادِرُ المُقتَدِرُ قَوِّنِی وَقَلبِی۔“ پڑھ کر ہاتھ کی ہتھیلی اٹھا کر دل پر پھونک دیں اور پھر وہی ہتھیلی جو دل پر رکھی تھی اس کو دل پر ملیں انشاءاللہ دل میں درد نہ ہوگا یہ میرا اور کئی حضرات کا آزمودہ ہے۔ (بشکریہ عبقری)

  3. چھال ارجن، اجواین دیسی، پودینہ خشک ہر ایک 50 گرام، اصلی قلمی شورہ زمینی، نوشادر، شہد ہر ایک 30 گرام، چینی 750 گرام۔ ارجن، اجواین، پودینہ کو 4 کلو پانی میں بھگو دیں۔ صبح ہلکی آنچ پر پکایں جب 1 کلو رہ جاۓ تو چھان کر پھر چینی ڈال کر ہلکی آنچ پر پکا کر شربت بنا لیں اب اس میں نوشادر اور قلمی شورہ پیس کر ڈال دیں۔ 3 منٹ بعد شہد ڈال کر اتار لیں۔ صبح نہار منہ 2 چمچ کھانے والے ہمراہ نیم گرم پانی 1 ماہ استعمال کریں۔ (الشفاء ہربل فارما)

چند مفید ایجادات اور ڈوایؑسز

دل Heart

Impulse_Device_for_Chronic_Heart_Failure

دل Heart

treatment of congestive heart failure

دل Heart

Personal Health Monitor System

دل Heart

pulse and heart beating monitor

دل Heart

ECG device

دل Heart

Cardiomyopathy Device

دل Heart

vasovagal_syncope

دل Heart

Heart Pacemaker

دل Heart

Pulse_Oximeter

دل Heart

Apple Watch Heart Rate Monitoring

دل Heart

Implantable Cardiac Monitor through Mobile

دل Heart

device-CardioKey

دل Heart

Handheld_ECG_Heart_Rate


ماخوذ

  • UNESCO
  • وکی پیڈیا
  • رموز تشخیص از حکیم محمد صدیق اختر
  • ڈاکٹر سایؑمن جوزف Dr. Saiman Jozaf
  • ہیلتھ لایؑن healthline.com
  • بلڈ پریشر سے نجات (Robert E. Kowalski)
  • دل کی بیماری ڈاکٹر سایؑمن جوزف Dr. Saimen Jozaf


Comments are Closed